منگل , اپریل 24 2018
Home / بلوچستان / صوابی میں پَن چرخی کا استعمال اب بھی ہوتا ہے لیکن پانی نکالنے کےلئے نہیں

صوابی میں پَن چرخی کا استعمال اب بھی ہوتا ہے لیکن پانی نکالنے کےلئے نہیں

انیس ٹکر

جدید زمانے میں آب پاشی کے صدیوں پرانے نظام پن چرخی کی جگہ ٹیوب ویلوں نے لے لی ہیں تاہم خیبرپختونخوا کے ضلع صوابی میں پن چرخی کا استعمال اب بھی ہورہا ہے لیکن یہاں پن چرخی کو پانی نکالنے کےلئے نہیں بلکہ ایک خصوصی مقابلے کےلئے کیا جاتا ہے جس کے ساتھ بیل کو باندھ کر دوڑایا جاتا ہے۔

IMG-20180103-WA0015

ضلع صوابی میں ہر سال کے آخری دن پن چرخی کے ذریعے بیلوں کا مقابلہ ہوتا ہے جس میں زمیندار اپنے بیل لے آتے ہیں اور مقابلے میں حصہ لیتے ہیں۔

بیلوں کا مقابلہ منعقد کرنے والے اختر علی کا کہنا ہے کہ اس مقابلے میں بیلوں کو پن چرخی سے باندھا جاتا ہے اور 8 منٹ میں جو بیل سب سے زیادہ چکر لگاتا ہے وہ یہ مقابلہ جیت جاتا ہے۔

”ریفری بیٹھا ہوتا ہے وہ بیل کے چکر گنتا ہے، جب ریفری سیٹی بجاتا ہے تو پھر کوئی بھی بیل کو آواز نہیں دے سکتا، بیل کے چکر لگانے کےلئے جس جگہ کو مختص کیا جاتا ہے اس کے اِرد گِرد رسیاں باندھی جاتی ہے جہاں اندر جانا منع ہوتا ہے۔ جب 8 منٹ پورے ہو جاتے ہیں تو ریفری دوبارہ سیٹی بجاتا ہے جس کے بعد مالک اپنے بیل کر پکڑ لیتا ہے، جو بیل زیادہ چکر لگاتا ہے وہ مقابلہ جیت جاتا ہے”

IMG-20180103-WA0019

انہوں نے کہا کہ مقابلوں سے قبل بیلوں کو خصوصی خوراک اور تربیت کے ذریعے تیار کیا جاتا ہے۔ بیل کو خوراک میں دیسی گھی، بادام، انڈے، خصوصی تیل، ونڈہ، کوپرا اور کالا چنا دیا جاتا ہے، تربیت میں بیل کو پن چرخی پر چکر دے کر مقابلوں کےلئےتیار کیا جاتا ہے۔

IMG-20180103-WA0009

اختر علی کا کہنا ہے کہ پن چرخی ایک صدیوں پرانا نظام ہے جسے کنویں سے پانی اوپر نکالنے کے لیے استعمال کیا جاتا تھا، وقت کے ساتھ ساتھ جدید زمانے میں آب پاشی کے اس روایتی نظام کی جگہ زیادہ تر ٹیوب ویلوں نے لے لی ہے لیکن اس صدیوں پرانے تاریخی پن چرخی کو زندہ رکھنے کےلئے مقابلوں کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے۔

”صدیوں پہلے لوگ بیلوں سے ہل چلانے اور آبپاشی کےلئے پن چرخی چلانے کا کام لیا جاتا تھا، اب دور جدید میں اس نظام کی جگہ ٹیوب ویلوں نے لے لی ہیں لیکن پرانے روایات کو زندہ رکھنے کےلئے اب ہم نے بیلوں کے مقابلے شروع کردیئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اِن مقابلوں میں خیبرپختونخوا سمیت ملک بھر سے زمیندار اپنے بیل لاتے ہیں اور مقابلے میں حصہ لیتے ہیں لیکن فاتح بیل کے مالک کو کسی قسم کا انعام دینے کے بجائے صرف ایک سرخ جھنڈا دے دیا جاتا ہے جس سے اُس بیل کی قیمت مارکیٹ میں دوگنا ہوجاتی ہے۔

تبصرہ کریں

Check Also

نوجوان کی خود کشی کی کوشش، اسپتال منتقل

سوات (باخبر سوات ڈاٹ کام) سیدو شریف کے علاقہ مرغزار میں نوجوان نے خود پر فائرنگ کرکے اقدام خود کشی کر لیا۔ سلیمان نے نامعلوم وجوہات کی بنا پر پستول سے خود پر فائرنگ کی جس کو زخمی حالت میں طبی امداد کے لئے سیدو شریف ہسپتال منتقل کردیا گیا ۔

Pin It on Pinterest

Shares
Share This